Thursday, March 15, 2012

پتھرمیں پھول


جنہیں جانا ہوتا ہے وہ کبھی رکتے نہیں ہیں۔ مجھے تو یہ بات چھ سال کی عمر میں پتہ چل گئی تھی۔ اور میں نے تہیہ کیا تھا کہ میں زندگی میں کبھی دوبارہ یہ حماقت نہیں کروں گا۔لیکن وہ زندگی ہی کیا جس میں غلطیاں نہ ہوں اور دہرائی بھی نہ جائیں! مجھے غلطیاں بری نہیں لگتیں بشرطیکہ ان کا ازالہ ممکن ہو۔ لیکن کیا کہیں کہ جس کا ازالہ ہو جائے وہ غلطی نہیں ، جو جا کر لوٹ آئے سمجھو گیا ہی نہیں۔

Monday, December 26, 2011

Jemima describes Imran’s speech as emotional

Also appeared on The News Tribe

Jemima Khan, ex-wife of Pakistan Tehreek-e-Insaf Chairman Imran Khan on Sunday termed the speech by his former husband as very emotional.
In her tweets on the social websiteTwitter the daughter of Sir James Goldsmith, one of the world’s richest people wrote “Who needs the Queen’s speech? That was emotional. My boys are proud. And my Uncle now thinks he speaks Urdu.”
“Struggling to translate Imran’s speech into English for my family” She wrote.
In a statement posted on social networking site Twitter, she said Imran was setting a new example in the world and her children feel proud of their father.
“Loving the PTI and Imran Khan supporters, who have changed their profile picture to “Yes We Khan.” Lots of support from overseas Pakistanis too” writes Jemima.
She said that the PTI’s Karachi public meeting was bigger than that of Lahore wherein a large number of children, women and senior citizens participated

Boss is not in good mood

Now a days, your Boss (Gen Kyani) is not in good mood, but he can't look usm chalo hath hi mila lain ;)

Sunday, October 30, 2011

Tuesday, December 14, 2010

روزگاراہم سہی، خود مختار زندگی بھی ضروری ہے۔۔۔

Employment is Essential...But Principled Living is More Important
ڈاکٹر وکٹر فرینکل آسٹریا کے معروف ماہر نفسیات تھے جنہوں نے دوسری جنگ عظیم کے دوران تقریبا تین سال جرمنی کی قید میں گزارے تھے اور وہاں کی سختیوں کو برداشت کیا تھا۔جنگ کی تباہ کاریوں اور حالات کی سختی نے ان کے آس پاس کے تقریباَ تمام قیدیوں کو نفسیاتی مریض بنا دیا تھا اور وہ اپنے ہو ش و ہواس کھو بیٹھے تھے۔
قید میں وکٹر کے لئے سب سے سخت لمحات وہ تھے جن میں ایک کے بعد ایک ان کے والد، والدہ اور اہلیہ قید خانے کی سختی کی وجہ سے اس دنیا سے رخصت ہو گئے۔
لیکن اسی قید کے دوران وکٹر نے وہ اصول و ضوابط مرتب کیے جو آج کی دنیا میں شخصیت سازی کی بیشتر تربیتی ورکشاپس اور ٹریننگ کورسز میں استعمال کیے جاتے ہیں جن کا لب لباب یہ ہے کہ انسان کس طرح ایسی خود آگاہی اور خود مختاری حاصل کر سکتاہے کہ اپنی زندگی حالات کی رو میں بہہ کر نہیں بلکہ اپنے طے شدہ اصولوں کے تحت گزا ر سکے۔

Saturday, December 11, 2010

Mobilink: Such Jazba, Logo Chori Ka!!!

SUCH TRUTH. SUCH PASSION. SUCH JAZBA

These are the words from a cellular company Mobilink’s recent promotional campaign of its “Youth Package” to capture youth market of Pakistan.

Launched few days back massively through hoardings and other media tools, the company claimed that “Such Jazba” was derived from values of our society with particular focus on youth. Have a look at “values” it describes: